صدائیں

March 15, 2021
broken
0 0

اب لاکھ تیرے در کے دریچے کُھلے رہیں
آواز مر گئی ، تو صدائیں کہاں سے دوں؟

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *