اَشکِ ناداں سے کہو بعد میں پچھتائیں گے

January 28, 2021
Love
1 0

اَشکِ ناداں سے کہو بعد میں پچھتائیں گے
آپ گِر کر میری آنکھوں سے کدھر جائیں گے

اپنے لفظوں کو تَکلُم سے گِرا کر جانا
اپنے لہجے کی تھکاوٹ میں بِکھر جائیں گے

تُم سے لے جائیں گے ہم چھین کے وعدے اپنے
ہم تو قسموں کی صداقت سے بھی ڈر جائیں گے

اِک تیرا گھر تھا میری حدِ مُسافت لیکن
اب یہ سوچا ہے کہ ہم حد سے گُزر جائیں گے

اپنے افکار جلا ڈالیں گے کاغذ کاغذ
سوچ مَر جاۓ گی تو ہم آپ بھی مَر جائیں گے

اِس سے پہلے کہ جدائی کی خبر تُم سے ملے
ہم نے سوچا ہے کہ ہم تُم سے بچھڑ جائیں گے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *